31

تحریک انصاف اور ایم کیو ایم پاکستان کے رہنماؤں کی اہم ملاقات

کراچی میں ایم کیو ایم کے سینئر رہنمائوں اور تحریک انصاف کے رہنما جہانگیر ترین میں اہم ملاقات ہو ئی ، جس میں پی ٹی آئی اور ایم کیو ایم کےتحریری معاہدے پر عمل درآمد ، اب تک کی ہونے والی پیش رفت ، دونوں جماعتوں کے درمیان ورکنگ ریلیشن شپ سمیت دیگر امور پر گفتگوہو ئی۔

ذرائع کے مطا بق جہانگیر ترین کے سامنے ایم کیو ایم نے اپنے مطالبات ، تحریری معاہدے کو پھر رکھ دیاہے، ایم کیو ایم نے شکوہ بھی کیا ہے کہ ابھی تک مئیر کراچی و حیدرآباد کے لیے مختص فنڈز، کراچی پیکج، ، بلدیاتی اختیارات، آفسسز کی واپسی اور لاپتہ و اسیرکارکنان کی بازیابی ابھی تک ممکن نہیں ہوسکی ہے۔

ایم کیو ایم کے رہنما خالد مقبول صدیقی نے کہا کہ حیدرآباد یونیورسٹی کا کام بھی سست روی کا شکار ہے، پیپلز پارٹی نے شہری سندھ کو تباہ کردیا ہے، پانی مافیا کی سرپرستی سے شہر بوند بوند کو ترس رہا ہے، ملازمتوں میں متعصبانہ پالیسی ، اختیارات کی عدم فراہمی نے شہر کے انفراسٹکچر کو تباہ کردیا ہے۔

پی ٹی آئی رہنما جہانگیر ترین نے ایم کیو ایم کے رہنما ئو ں کے شکوے اور مسائل سننے کے بعد کہا کہ شہرقائد کے مسائل سے واقف ہیں ، کراچی کی ترقی اور ترقیاتی منصوبوں کی جلد تکمیل وزیراعظم عمران خان کی اولین ترجیع ہے، بلدیاتی نمائندوں کو اختیارات کی فراہمی ، فنڈز کی شفافیت کے ساتھ منتقلی اور عوام کی فلاح میں انکا استعمال پی ٹی آئی کا ایجنڈہ ہے۔

جہانگیر ترین نے یقین دہانی دلا تے ہو ئے کہا کہ تحریک انصاف اپنے وعدے اور تحریری معاہدے پر من و عن عمل کرے گی ، تحریری معاہدے پر کتنا عمل ہوا ہے اور اس میں کیا پیش رفت ہے اسی لیے ایم کیو ایم کے دوستوں سے ملنے کراچی آیا ہوں ، ایم کیو ایم کے تمام تحفظات دور اور مطالبات پورے کریں گے۔

واضح رہے کہ اس ملا قات میں ایم کیو ایم پاکستان کے سربراہ خالد مقبول صدیقی، میئر کراچی وسیم اختر، نسرین جلیل، کنورنوید جمیل موجود تھے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں