23

بچوں کی خوراک میں شکر کا تناسب تشویش ناک ہے، ڈبلیو ایچ او رپورٹ

ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن (ڈبلیو ایچ او) کی جانب سے ایک نئی رپورٹ کے مطابق مارکیٹ میں موجود بچوں کی خوراک سے متعلق اشیاء میں بہت زیادہ چینی کی مقدار شامل ہیں۔

ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن نے خبردار کیا کہ  بچوں کی کھانے کی اشیاء میں چینی کی مقدار زیادہ ہونے کے باعث ان میں داتوں کے امراض میں تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے۔

ڈبلیو ایچ او نے اپنی رپورٹ میں بچوں کے لیے باہر کی خوراک کو انتہائی مضر قرار دیا جبکہ اس کے مقابلے میں کہا ہے کہ ماں  کے دودھ کو ترجیح دی جائے اور خاص طور پر چھ ماہ  تک ماں کے دودھ کے استعمال کامشورہ دیا ہے۔

ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن نے آسٹریا، بلغاریہ، اسرائیل اور ہنگری میں 500 سے زائد اسٹورز کا معانہ کیا تو پتہ چلا کہ اسٹورز میں موجود 60 فیصد ایسی غذا  موجود ہیں جو چھ ماہ سے زائد عمر کے بچوں کے لئے بہترین ہونے کا گمراہ کن دعوے کر رہے ہیں۔

رپورٹ میں مختلف ممالک کو مشورہ دیا گیا ہے کہ وہ ڈبے کے دودھ  کے استعمال پر پاندی لگائیں۔

ڈبلیو ایچ او نے رپورٹ میں مشورہ دیا کہ چھ مہینے اور دو سال کے درمیان بچوں کو غذائیت مند اورگھر کا تیار شدہ کھانے کھلایا جائے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں