29

قبائلی اضلاع میں الیکشن: گنتی کا عمل جاری، غیر سرکاری نتائج کا سلسلہ شروع

پشاور: صوبہ خیبرپختونخواہ میں ضم کیے گئے قبائلی علاقوں میں ہونے والے پہلے تاریخ ساز انتخابات میں پولنگ کا وقت اپنے اختتام کو پہنچا۔ گنتی کا عمل جاری ہے، غیر حتمی نتائج کی آمد کا سلسلہ جاری ہے۔

تفصیلات کے مطابق خیبرپختونخواہ میں ضم کیے گئے قبائلی اضلاع کے پہلے تاریخ سازالیکشن کے لیے صبح آٹھ بجے پولنگ کا آغاز ہوا، میرانشاہ میں پہلا ووٹ کاسٹ کیا گیا، پولنگ بغیر کسی وقفے کے شام 5 بجے تک جاری رہی۔ 16 صوبائی نشستوں پر مقابلہ ہوا۔

اٹھائیس لاکھ سے زائد ووٹرز نے حق رائے دہی استعمال کیا، دو خواتین سمیت دوسو پچاسی امیدوار میدان سیاست میں‌ مدمقابل تھے۔

قبائلی اضلاع میں 1 ہزار 897 پولنگ اسٹیشنز قائم کیے گئے تھے، جس میں 554 کو انتہائی حساس اور 461 کو حساس قرار دیا گیا تھا، شمالی اور جنوبی وزیرستان کے پولنگ اسٹیشن اس فہرست میں شامل تھے۔

الیکشن کا عمل پرامن تھا، عوام کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔ بزرگوں کے علاوہ خواتین نے بھی بڑھ چڑھ کر حصہ لیا۔ انھوں نے پاکستان زندہ باد کے نعرے

لگائے اور پاک فوج کو خراج تحسین پیش کیا۔ سیکیورٹی اہل کار ڈیوٹی پر مامور رہے۔

جو افراد پولنگ اسٹیشن میں موجود ہیں، وہ ووٹ کاسٹ کر رہے ہیں، جہاں ووٹ کاسٹ ہوچکے ہیں، وہاں گنتی کا عمل جاری ہے۔

ابتدائی نتائج

پی کے107 خیبر 3ک ے پولنگ اسٹیشن 5ک ا غیرسرکاری غیرحتمی نتیجہ سامنے آگیا، تحریک انصاف کے محمد زبیر 26ووٹ لے کر پہلے نمبر پر ہیں۔ جماعت اسلامی کے شاہ فیصل آفریدی 18ووٹ لے کر دوسرے نمبر پر موجود ہیں۔

پی کے 100باجوڑون کے پولنگ اسٹیشن مانو ڈھیری کا غیرسرکاری غیر حتمی نتیجہ بھی اے ٓآر وائی نیوز کو موصول ہوگیا۔ تحریک انصاف کے انور زیب خان 453ووٹ لے کر آگئے ہیں۔

یہ غیر حتمی، غیر سرکاری نتائج ہیں۔ نتائج کی آمد کا سلسلہ جاری ہے۔

قبائلی علاقوں میں صوبائی اسمبلی کی نشستوں پر انتخابات سے متعلق اے آر وائی نیوز نے خصوصی ٹرانسمیشن جاری ہے،جس میں ناظرین کو لمحہ بہ لمحہ بہ خبر رکھا جارہا ہے۔

خیال رہے کہ فاٹا کا صوبہ خیبر پختونخواہ میں انضمام گزشتہ برس عمل میں آیا، وزیر اعظم عمران خان نے جلد سے جلد فاٹا میں صوبائی اور بلدیاتی انتخابات کروانے کا اعلان کیا تھا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں