47

اینکرپرسن مرید عباس کے قتل کیس کی تحقیقات میں نیا موڑ

کراچی کے علاقے ڈیفنس میں قتل ہونے والے بول نیوز کے اینکر پرسن مرید عباس اور خضر حیات کے قتل کی تحقیقات میں اہم پیش رفت ہوئی ہے۔

تفتیشی ذرائع کے مطابق مرید عباس کے قتل میں ملوث ملزم عاطف زمان کے پاس سب سے زیادہ سرمایہ کاری مرید عباس نے تھی، مرید عباس اور اس کے قریبی دوستوں نے گیا رہ کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کر رکھی تھی۔

تفتیشی ذرائع کا کہنا ہے مقتول خضر حیات نے پانچ کروڑ روپے کاسرمایہ لگایا جبکہ نجی ٹی وی کے دو اینکرز نےساڑے آٹھ کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کی۔

قتل کے واقعے کے عینی شاہد عمر ریحان نے پانچ کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کی جبکہ پلاسٹک کے ایک تاجر نےبیاسی لاکھ روپے اور عاقب نامی شخص نے پچاس لاکھ روپے کی سرمایہ کاری کی ہو ئی تھی۔

تفتیش میں انکشاف ہوا ہے کہ کراچی میں اینکرز اور میڈیا ورکرز سمیت 100 سے زائد شہریوں سے سرمایہ کاری کے نام پر لگ بھگ تین سو کروڑ روپے بٹورنے والے ملزم عاطف زمان نے سب سے پہلے ساڑھے 7 لاکھ روپے کا فراڈ اپنے ہی والد کے ساتھ کیا تھا۔

پولیس کی پوچھ گچھ کے دوران ملزم عاطف زمان اب تک ایک عام فراڈیا ثابت ہواہے جس نے خاص طور پر میڈیا پرسنز کو اس لیے اپنے چُنگل میں پھنسایا کہ اینکر پرسنز کی انویسٹمنٹ دیکھ کرعام شہری بڑی آسانی سے اس کے جال میں پھنس رہے تھے۔

ملزم کے بیان کے مطابق سب سے زیادہ انویسٹمنٹ اینکر مرید عباس کے توسط سے ملی۔ ملزم کے مطابق مرید عباس نے کس کس سے کتنے پیسے لے کر اس تک پہنچائے یہ تو اسے نہیں معلوم تاہم اس نے بتایا کہ مرید کی اہلیہ نے بھی کئی خاتون اینکرز سے بھاری رقوم جمع کرکے اپنے شوہر کے توسط سے سرمایہ کاری کی تھی۔

ملزم سے برآمد کی گئی سرمایہ کاری کے حساب کتاب کی ڈائری کی مدد سے اب تک ایک سو 20 کروڑ روپے انویسٹ کرنے والوں کے نام مل چکےہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں